لندن کے ھسپتال میں وزیراعظم پاکستان کے دل کا اپریشن شروع

لندن: برطانیہ کے دارالحکومت لندن کے ہسپتال میں وزیر اعظم نواز شریف کی اوپن ہارٹ سرجری جاری ہے۔

ڈان نیوز کے مطابق آپریشن سے قبل وزیر اعظم اپنی صحت کے حوالے سے پرعزم اور ہشاش بشاش دکھائی دیئے، جبکہ انہوں نے اپنے اہلخانہ سے بات بھی کی۔

انھوں نے والدہ سے ٹیلی فون پر بات چیت کی اور اپنی صحت سے متعلق آگاہ کیا۔

آپریشن تھیٹر کے باہر نواز شریف کی اہلیہ بیگم کلثوم نواز۔ بیٹا حسین نواز اور بھائی وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف بھی موجود ہیں، جبکہ وزیراعظم نے پارٹی رہنماؤں اور کارکنوں کو اسپتال آنے سے منع کردیا ہے۔

وزیر اعظم کے آپریشن کے لیے امریکا سے دو ماہر امراض قلب کو لندن بلایا گیا ہے، آپریشن کے بعد نواز شریف کو انتہائی نگہداشت یونٹ (آئی سی یو) منتقل کیا جائے گا، جبکہ ان کی وطن واپسی کا فیصلہ ڈاکٹروں کی مشاورت کے بعد کیا جائے گا۔

ملک بھر میں وزیر اعظم نواز شریف کے آپریشن اور صحتیابی کی دعائیں کی جارہی ہیں، اور اس سلسلے میں مختلف عبادت گاہوں میں خصوصی دعائیہ تقریبات کا انعقاد کیا گیا، جبکہ اسکولوں میں بھی بچوں نے ان کی صحتیابی کی دعا کی۔

ریڈیو پاکستان کی رپورٹ کے مطابق عالمی رہنماؤں نے بھی وزیر اعظم نواز شریف کے کامیاب آپریشن اور جلد صحت یابی کی دعا کی۔

ان رہنماؤں میں روس کے صدر ولادی میر پیوٹن، افغانستان کے صدر اشرف غنی، تاجکستان کے صدر امام علی رحمانوف اور برطانوی وزیرخارجہ فلپ ہیمنڈ شامل ہیں۔

گزشتہ روز وزیر اعظم نے دل کے آپریشن سے قبل ہندوستانی ہم منصب نریندر مودی کو ٹیلی فون کیا اور جلد صحت یابی کے لیے دعاؤں پر ان کا شکریہ ادا کیا۔

قبل ازیں وزیر اعظم نواز شریف نے لندن میں پاکستانی ہائی کمیشن سے قومی اقتصادی کونسل کے اجلاس کی ویڈو لنک کے ذریعے صدارت کی اور وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی جانب سے پیش کی گئیں بجٹ تجاویز کی منظوری دی۔

Tags: , , ,